"عاصی کرنالی" کے اعادوں کے درمیان فرق

"نعت کائنات" سے
:چھلانگ بطرف رہنمائی, تلاش
(7 intermediate revisions by 2 users not shown)
لکیر 1: لکیر 1:
{{#seo:
+
[[ملف:Aasi Karnali.jpg| 300px|linki=عاصی کرنالی]]
|title=عاصی کرنالی 
+
{{ بسم اللہ }}
|keywords=عاصی کرنالی، نعت گو شاعر عاصی کرنالی، شاعر عاصی کرنالی ، Aasi karnali, poet Aasi karnali
+
|description=ڈاکٹر عاصیؔ کرنالی ایک قادرالکلام اور زودگو شاعر تھے۔ ابتدا میں آپ کا شمار غزل گو شعرا میں ہوتا تھا بعدازاں پھر لالہ زارِ نعت میں بھی آپ کی نعتوں کی گونج سنائی دینے لگی۔ یہی وجہ ہے کہ آپ کی نعتوں کے مجموعوں کی تعداد زیادہ ہے۔ ’’اُردو حمد ونعت پر فارسی روایت کا اثر‘‘ مقالہ برائے پی ایچ۔ڈی بھی نعت سے اسی قوی تعلق کی روشن دلیل ہے
+
}}
+
[[ملف:Aasi Karnali.jpg| 300px|link=عاصی کرنالی ]]
+
 
+
 
[[زمرہ : نعت گو شعراء ]]
 
[[زمرہ : نعت گو شعراء ]]
 
[[ زمرہ: شعراء ]]
 
[[ زمرہ: شعراء ]]
لکیر 11: لکیر 6:
  
  
شیخ وزیر محمد کے فرزند عاصیؔ کرنالی کا پیدائشی نام شریف احمد ہے۔ [[2 جنوری]] [[1927]]ء کو [[کرنال]] [[مشرقی پنجاب]]، [[بھارت]] میں پیدا ہوئے۔ ایم اے اُردو، ایم ا ے فارسی تھے۔ ذریعہ معاش درس و تدریس تھا۔ گورنمنٹ ملت کالج ملتان کے پرنسپل رہے۔ پروفیسر ڈاکٹر عاصی کرنالی ۔1947 میں ہجرت کر کے ملتان آئے۔بھر پور اور متحرک زندگی گزاری۔سکول ٹیچر کی حیثیت سے عملی زندگی کا آغاز کیا اور کالج کے پرنسپل کی حیثیت سے ریٹائر ہوئے۔سابق وزیرِاعظم یوسف رضا گیلانی بھی ان کے شاگردوں میں سے ہیں۔11 شعری مجموعوں اور مجموعی  طور پر 19    کتابوں کے خالق ہیں ۔ ۔ ان کی نعتوں کے مجموعے نعتوں کے گلاب کو صدارتی ایوارڈ سے نوازا گیا ۔
+
شیخ وزیر محمد کے فرزند عاصیؔ کرنالی کا پیدائشی نام شریف احمد ہے۔ [[2 جنوری]] [[1927]]ء کو [[کرنال]] [[مشرقی پنجاب]]، [[بھارت]] میں پیدا ہوئے۔ ایم اے اُردو، ایم ا ے فارسی تھے۔ ذریعہ معاش درس و تدریس تھا۔ گورنمنٹ ملت کالج ملتان کے پرنسپل رہے۔
  
 
آپ نے ’’اُردو حمد و نعت پر فارسی روایت کا اثر‘‘ کے موضوع پر اعلیٰ تحقیق پیش کرکے [[پی ایچ ڈی ]] کی سند حاصل کی۔ ۔
 
آپ نے ’’اُردو حمد و نعت پر فارسی روایت کا اثر‘‘ کے موضوع پر اعلیٰ تحقیق پیش کرکے [[پی ایچ ڈی ]] کی سند حاصل کی۔ ۔
لکیر 37: لکیر 32:
  
 
* [[طلوعِ آفتابِ ہدایت ۔ عاصؔی کرنالی | طلوعِ آفتابِ ہدایت]]
 
* [[طلوعِ آفتابِ ہدایت ۔ عاصؔی کرنالی | طلوعِ آفتابِ ہدایت]]
 
* [[خاک جب اس پیکر نوری کا مدفن ہو گئی ۔ عاصی کرنالی | خاک جب اس پیکر نوری کا مدفن ہو گئی ۔ عاصی کرنالی ]]
 
 
=== اعزازات ===
 
 
* صدارتی ایوارڈ
 
* نعت پر پی ایچ ڈی
 
*
 
 
  
 
=== احباب کی آراء ===
 
=== احباب کی آراء ===
لکیر 61: لکیر 47:
  
 
=== مزید دیکھیے ===
 
=== مزید دیکھیے ===
{{پی ایچ ڈی سکالرز}}
 
  
{{ٹکر 1 }}
+
[[ڈاکٹر ریاض مجید ]] | [[ ڈاکٹر فرمان فتح پوری ]] | [[ ڈاکٹر شہزاد احمد ]] | [[ڈاکٹر محمد حسین مشاہد رضوی ]] | [[عبد العزیز خالد ]]
{{باکس شخصیات }}
+
{{ٹکر 2 }}
+
{{باکس 1 }}
+

تـجدید بـمطابق 09:44, 2 اپريل 2018

linki=عاصی کرنالی


شیخ وزیر محمد کے فرزند عاصیؔ کرنالی کا پیدائشی نام شریف احمد ہے۔ 2 جنوری 1927ء کو کرنال مشرقی پنجاب، بھارت میں پیدا ہوئے۔ ایم اے اُردو، ایم ا ے فارسی تھے۔ ذریعہ معاش درس و تدریس تھا۔ گورنمنٹ ملت کالج ملتان کے پرنسپل رہے۔

آپ نے ’’اُردو حمد و نعت پر فارسی روایت کا اثر‘‘ کے موضوع پر اعلیٰ تحقیق پیش کرکے پی ایچ ڈی کی سند حاصل کی۔ ۔

شاعری و نعت گوئی

ڈاکٹر عاصیؔ کرنالی ایک قادرالکلام اور زودگو شاعر تھے۔ ابتدا میں آپ کا شمار غزل گو شعرا میں ہوتا تھا بعدازاں پھر لالہ زارِ نعت میں بھی آپ کی نعتوں کی گونج سنائی دینے لگی۔ یہی وجہ ہے کہ آپ کی نعتوں کے مجموعوں کی تعداد زیادہ ہے۔ ’’اُردو حمد ونعت پر فارسی روایت کا اثر‘‘ مقالہ برائے پی ایچ۔ڈی بھی نعت سے اسی قوی تعلق کی روشن دلیل ہے۔ آپ زبان و بیان پر قدرت رکھتے تھے آپ کی نعتیہ شاعری نعتیہ ادب میں ایک موثر حوالہ ہے۔ آپ کی کہی یہ حمد باری تعالیٰ تو بہت معروف ہے۔


نقش ترا فزوں فزوں، نام ترا رواں رواں

مدح تری سخن سخن، وصف ترا بیاں بیاں

کام مرا خطا خطا، شان تری عطا عطا

میرے خدا کرم کرم، میرے کریم اماں اماں


مجموعہ ہائے کلام

نعتیہ مدحت | نعتوں کے گلاب | جاوداں | حرف شیریں | آوازِ دل

حمدیہ و نعتیہ کلام

احباب کی آراء

عزیز احسن اپنی کتاب اردو نعت اور جدید اسالیب میں فرماتے ہیں

عاصی کرنالی موضوع کے بھرپو رادراک کے ساتھ شاعری کرتے ہیں۔ اسلوب اظہار میں اعلیٰ سنجیدگی کا دامن کبھی ہاتھ سے جانے نہیں دیتے۔ ان کی شاعرانہ مشق اس حد تک ہے کہ وہ جس بات کو جس انداز سے کہنا چاہیں کہہ سکتے ہیں ۔ عاصی کی شاعری میں استعاروں ، تشبہیوں اور علامتوں کا ایچ پیچ بھی نہیں ہوتا۔ وہ مروّجہ بلکہ خاصی حد تک کلاسیکی مزاج کی شاعری کرتے ہیں۔ لیکن اپنے انداز نگارش سے بات میں ندرت کے پہلو پیدا کردیتے ہیں۔ (ص۱۴۷)

وفات

عاصیؔ کرنالی 20جنوری 2011ء کو ملتان میں انتقال کر چکے ہیں۔


مزید دیکھیے

ڈاکٹر ریاض مجید | ڈاکٹر فرمان فتح پوری | ڈاکٹر شہزاد احمد | ڈاکٹر محمد حسین مشاہد رضوی | عبد العزیز خالد