مایوسیوں کا میری سہارا تمہیں تو ہو ۔ حامد بدایونی

"نعت کائنات" سے
This is the approved revision of this page, as well as being the most recent.
:چھلانگ بطرف رہنمائی, تلاش

"نعت کائنات " پر اپنے تعارفی صفحے ، شاعری، کتابیں اور رسالے آن لائن کروانے کے لیے رابطہ کریں ۔ سہیل شہزاد : 03327866659

شاعر: حامد بدایونی

نعتِ رسولِ کریم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم[ترمیم]

مایوسیوں کا میری سہارا تمہیں تو ہو

میرے خیال و خواب کی دنیا تمہیں تو ہو


تاباں ہے جس کے نور سے دنیائے زندگی

وہ شمع نور، نورِ سراپا تمہیں تو ہو


پھرتے ہیں جس کو ڈھونڈتے مہتاب وآفتاب

اے حاصل مراد وہ جلوہ تمہیں تو ہو


ہے حُسن میں تمہارے کچھ اس طرح دل کشی

سو بار جس کو دیکھ کر دیکھا تمہیں تو ہو


تم اور صرف تم ہو زمانہ کی آبرو

گیسو جہاں کا جس نے سنوارا تمہیں تو ہو


تم سامنے نہیں ہو تو کچھ سوجھتا نہیں

آنکھوں کا نور، دل کا اجالا تمہیں تو ہو


قربان تم پر دونوں جہاں کی مسرتیں

روزِ ازل سے دل کی تمنا تمہیں تو ہو


تم وہ کہ بُت کدے کو بھی کعبہ بنا دیا

مقصودِ کعبہ، کعبہ کا کعبہ تمہیں تو ہو


سینہ بنا ہوا ہے مدینے کا آئینہ

حامد کے دل میں سید والا تمہیں تو ہو