لطف ان کا عام ہو ہی جائے گا

"نعت کائنات" سے
This is the approved revision of this page, as well as being the most recent.
:چھلانگ بطرف رہنمائی, تلاش


نعت رسول کریم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم


از امام احمد رضا خان بریلوی


لطف ان کا عام ہو ہی جائے گا

شاد ہر ناکام ہو ہی جائے گا


جان دے دو وعدہ ءِ دیدار پر

نقد اپنا دام ہو ہی جائے گا


شاد ہے فردوس یعنی ایک دن

قسمت خدام ہو ہی جائے گا


یاد رہ جائیں گی یہ بے باکیاں

نفس تو تو رام ہو ہی جائے گا


بے نشانوں کا نشاں مٹتا نہیں

مٹتے مٹتے نام ہو ہی جائے گا


یاد گیسو ذکر حق ہے آہ کر

دل میں پیدا لام ہو ہی جائے گا


ایک دن آواز بدلیں گے یہ ساز

چہچہا کہرام ہو ہی جائے گا


سائلو! دامن سخی کا تھام لو

کچھ نہ کچھ انعام ہو ہی جائے گا


یاد ابرو کر کے تڑپو بلبلو!

ٹکڑے ٹکڑے دام ہو ہی جائے گا


مفلسو ان کی گلی میں جا پڑو

باغ خلد اکرام ہو ہی جائے گا


گر یونہی رحمت کی تاویلیں رہیں

مدح ہر الزام ہو ہی جائے گا


بادہ خواری کا سماں بندھنے تو دو

شیخ دُرد آشام ہو ہی جائے گا


غم تو ان کو بھول کر لپٹا ہے یوں

جیسے اپنا کام ہو ہی جائے گا


مٹ کہ گر یونہی رہا قرض حیات

جان کا نیلام ہو ہی جائے گا


عاقلو! ان کی نظر سیدھی رہے

بوروں کا بھی کام ہو ہی جائے گا


اب تو لائی ہے شفاعت عفو پر

بڑھتے بڑھتے عام ہو ہی جائے گا


اے رضا ہر کام کا اک وقت ہے

دل کو بھی آرام ہو ہی جائے گا



حدائق بخشش[ترمیم]

حدائق بخشش


پچھلا کلام[ترمیم]

محمد مظہر کامل ہے حق کی شان عزت کا

اگلا کلام[ترمیم]

لم یات نظیرک فی نظر مثل تو نہ شد پیدا جانا