"تجھ پہ قرباں ہوں میں اے ہاشمی ومطلبی ۔ نواب اختر محل بیگم اختؔر" کے اعادوں کے درمیان فرق

"نعت کائنات" سے
:چھلانگ بطرف رہنمائی, تلاش
(نیا صفحہ: شاعر: نواب اختر محل بیگم اختؔر تضمین بر : مرحبا سید مکی مدنی العربی ۔ جان قدسی === {{نعت }} === تج...)
 
(نیا صفحہ: شاعر: نواب اختر محل بیگم اختؔر تضمین بر : مرحبا سید مکی مدنی العربی ۔ جان قدسی === {{نعت }} === تج...)
 
(No difference)

حالیہ نظرثانی بمطابق 11:08, 28 جولائی 2017

شاعر: نواب اختر محل بیگم اختؔر

تضمین بر : مرحبا سید مکی مدنی العربی ۔ جان قدسی

نعتِ رسولِ آخر صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم[ترمیم]

تجھ پہ قرباں ہوں میں اے ہاشمی ومطلبی

کہ ہے مشہورِ دوعالم تری عالی نسبی

دیکھ رتبے کوترے شوکت افلاک دبی

’’ مرحبا سید مکی مدنی العربی

دل وجاں باد فدایت چہ عجب خوش لقبی‘‘


وہ ترا نور ہے ماہ فلک مہر وکرم

تیرے جلوے سے منور ہوئے دونوں عالم

تاب یوسف کوکہاں ہے کہ ترے دیکھے قدم

’’من بیدل بہ جمال تو عجب حیرانم

اللہ اللہ! چہ جمال است بدیں بوالعجبی‘‘


واہ کیا شان ہے ، کیا رتبہ ہے اور کیا درجا

خالق ارض وسما خودہے ترامدح سرا

انبیا کہتے ہیں سب صل علیٰ صل علیٰ

’’نسبتے نیست بذات تو بنی آدم را

برتر از آدم و عالم تو چہ عالی نسبی‘‘


تو ہے نیسانِ کرم اور سحابِ اکرام

بھر دیا موتیوں سے دامنِ اُمیدِ انام

بار آور ترے باعث سے ہے نخلِ اسلام

’’نخلِ بستانِ مدینہ ز تو سرسبز مدام

زاں شدہ شہرہ آفاق بشیریں رطَبی‘‘


سب سے پیدا کیا اللہ نے پہلے ترا نور

پردۂ نور کو اللہ نے رکھا مستور

اور اس نور کا اظہار ہوا جب منظور

’’ذات پاک تو دریں ملک عرب کرد ظہور

زاں سبب آمدہ قرآں بزبان عربی‘‘


ہے ترے نور سے پرنور زمیں دشت بدشت

گلشن چرخ بنی تیرے برائے گل گشت

تیرے ہی واسطے ہیں خاص یہ جَنات بھی ہشت

’’شب معراج عروج تو زافلاک گذشت

بہ مقامے کہ رسیدی نرسد ہیچ نبی‘‘


قدسیاں آنکھیں بچھاتے ہیں ترے زیرِقدم

خاک پاتیری سرمۂ چشمِ عالم

بخش دیجو مری تقصیر تو اے شاہ امم

’’نسبت خود بسگت کردم وبس منفعلم

زاں کہ نسبت بسگ کوے تو شد بے ادبی‘‘


سختی حشر سے گھبرائے گی جب مخلوقات

اور نہ بن آئے گی اے ابرِ کرم کوئی بات

انبیا سب تجھے کہویں گے کہ اے بحر نجات

’’ماہمہ تشنہ لبانیم و توئی آبِ حیات

لطف فرما کہ زحد می گزرد تشنہ لبی‘‘


ہوگئی لہو ولعب میں مری عمر بسر

یادِ خالق میں نہ مصروف ہوئی میں دم بھر

گھستی ہوں ناصیۂ عجز کو تیرے در پر

’’چشم رحمت بکشا سوے من انداز نظر

اے قریشی لقبی ہاشمی ومطلبی‘‘


دردِ عصیاں کے سبب سے مری جان چلی

اور بچنے کی نہیں سوجھتی تدبیر کوئی

عرض اختؔر کی بھی قدؔسی کی طرف سے ہے یہی

’’سیّدی اَنت حبیبی وطبیب قلبی

آمدہ سوے تو قدؔسی پئے درماں طلبی‘‘


مزید دیکھیے[ترمیم]

جان محمد قدسی