مسکن ہے جس حسیں کا مرے قلب زار میں ۔ سجاد مرزا

"نعت کائنات" سے
This is the approved revision of this page, as well as being the most recent.
:چھلانگ بطرف رہنمائی, تلاش

شاعر: سجاد مرزا


اپنے ادارے کی نعتیہ سرگرمیاں، کتابوں کا تعارف اور دیگر خبریں بھیجنے کے لیے رابطہ کیجئے۔Email.png Phone.pngWhatsapp.jpg Facebook message.png

حمدِ باری تعالی جل جلالہ[ترمیم]

مسکن ہے جس حسیں کا مرے قلب زار میں

اس کی نمو ہے ہر شجر و برگ و بار میں


سورج میں، چاند میں وہ ستاروں میں جلوہ گر

فصلِ خزاں میں ہے وہی رنگ بہار میں


صبح چمن میں، پنچھیوں کے چہچہوں میں وہ

کوہ و دمن میں بھی وہی ہے مرغزار میں


اس کی محبتوں سے سجی ہے یہ کائنات

سارا نظام ہے اسی کے اختیار میں


جن و ملک بھی اس کی ہی قدرت کے شاہکار

روشن سویر میں وہی شب کے غبار میں


اس کی عنایتوں پہ ہماری جبیں ہے خم

وہ ہے ہمارے جسم کے ہر ایک تار میں


سجاد کیا بیاں ہو اس کردگار کا

اک لطف بے بہا ملا ہے جس کے پیار میں


مزید دیکھیے[ترمیم]

اپنے ادارے کی نعتیہ سرگرمیاں، کتابوں کا تعارف اور دیگر خبریں بھیجنے کے لیے رابطہ کیجئے۔Email.png Phone.pngWhatsapp.jpg Facebook message.png

نئے اضافہ شدہ کلام
"نعت کائنات " پر اپنے تعارفی صفحے ، شاعری، کتابیں اور رسالے آن لائن کروانے کے لیے رابطہ کریں ۔ سہیل شہزاد : 03327866659
نئے صفحات