رنج و غم زیست کے جس وقت ستاتے ہیں مجھے ۔ سید وحید القادری عارف

"نعت کائنات" سے
This is the approved revision of this page, as well as being the most recent.
:چھلانگ بطرف رہنمائی, تلاش

شاعر: وحید القادری عارف

نعت ِ رسول ِ کریم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم[ترمیم]

رنج و غم زیست کے جس وقت ستاتے ہیں مجھے

ایسے لگتا ہے وہ دامن میں چھُپاتے ہیں مجھے


وہ مری اپنی بھی پہچان بھُلا دیتے ہیں

یاد آتے ہیں تو اِس طرح سے آتے ہیں مجھے


کیا تصور ہے کہ میخانہء عرفاں ہے کھلا

میرے آقا ہیں کہ نظروں سے پلاتے ہیں مجھے


اُن کی نسبت ہے کہاں مجھ سا گنہ گار کہاں

اپنے الطاف سے وہ اپنا بناتے ہیں مجھے


اِک فقط اُن کے کرم کا ہے سہارا ورنہ

میرے اپنے بھی جو ہیں بھولتے جاتے ہیں مجھے


اُن کی ہر ایک ادا اُسوہء حسنہ ٹہری

طور جینے کے بہر طور سکھاتے ہیں مجھے


نعت کہتا ہوں تو اک کیف میں یہ کون و مکاں

جیسے ہر دم مرے اشعار سُناتے ہیں مجھے


وہیں جینے وہیں مرنے کی ہے خواہش میری

بارہا لوگ مدینے میں جو پاتے ہیں مجھے


میں جو جاتا ہوں وہاں میں نہیں جاتا عارفؔ

اپنے در پر مرے سرکار بُلاتے ہیں مجھے

مزید دیکھیے[ترمیم]

پچھلا کلام | اگلا کلام | وحید القادری عارف کی حمدیہ و نعتیہ شاعری | وحید القادری عارف کا مرکزی صفحہ



اپنے ادارے کی نعتیہ سرگرمیاں، کتابوں کا تعارف اور دیگر خبریں بھیجنے کے لیے رابطہ کیجئے۔Email.png Phone.pngWhatsapp.jpg Facebook message.png

نئے اضافہ شدہ کلام
"نعت کائنات " پر اپنے تعارفی صفحے ، شاعری، کتابیں اور رسالے آن لائن کروانے کے لیے رابطہ کریں ۔ سہیل شہزاد : 03327866659
نئے صفحات