گریہ مرا وضو ہے حضوری نماز ہے ۔ شاہد ماکلی

"نعت کائنات" سے
This is the approved revision of this page, as well as being the most recent.
:چھلانگ بطرف رہنمائی, تلاش

شاعر : شاہد ماکلی

نعتِ رسولِ کریم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم[ترمیم]

گریہ مرا وُضو ہے ، حضوری نماز ہے

اب میں ہوں اور تصورِ شہر ِ حجاز ہے


باطن میں لو ہے ایک سراج ِ منیر کی

پتھر سا دل اِسی کی تپش سے گداز ہے


بگڑے ہوئے اُمور سنور جائیں گے مرے

اک دستِ مہربان مرا کارساز ہے


وابستگی حریصُ علیکم سے ہے مری

باطن میں اور طرح کا اک حرص و آز ہے


اللہ مجھ کو عشق میں ثابت قدم رکھے

اس راہ میں ہزار نشیب و فراز ہے