کیسا عالم ہے یہ در پر ترے شاھا آھا ۔ اشرف یوسفی

"نعت کائنات" سے
نظرثانی بتاریخ 09:01, 20 فروری 2017 از Admin (تبادلۂ خیال | شراکت)$7

(فرق) ←پرانی تدوین | Approved revision (فرق) | حالیہ نظرثانی (فرق) | →اگلا اعادہ (فرق)
:چھلانگ بطرف رہنمائی, تلاش

شاعر : اشرف یوسفی


نعت ِ رسول ِ کریم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم[ترمیم]

کیسا عالم ہے یہ در پر ترے شاھا آھا

ہمہ شاھاں ، ہمہ مسکین و گداھا آھا


تیری چوکھٹ پہ جبین ریز سلاطین ِ جہاں

خاکروبوں میں ترے فرماں روا ھا آھا


رومی و جامی و عطار تری رہ پہ نثار

شمس تبریز دمادم تنانا ھا آھا


خاک پر بوریا اور عرش پہ تکیہ تیرا

کہکشاؤں میں سواری تری آھا آھا


ذات ِ اقدس نے بھی تخلیق تجھے ویسے کیا

اپنی تخلیق کو جس شان سے چاھا آھا


تیرے ہر لفظ کے دامن میں جہان ِ معنی

تیرے ہر پل کو زمانون نے سراھا آھا


حسن ِ خوبان ِ جہاں پرتو ِ صد رنگ ترا

سب ترے نازوادا شوخ کلاھا آھا


تو ہے قرآن سراپا ترا آیات ِ مبیں

تو ہی حمٰ ہے یسٰین ہے طہٰ آھا


میں سیہ کار ترے مدح سراؤن میں شمار

تجھ پہ قربان شھا خلق پناھا آھا


اشرف یوسفی کے مزید کلام[ترمیم]

  • کیسا عالم ہے یہ در پر ترے شاہا آہا

مزید دیکھیے[ترمیم]

پرویز ساحر | حافظ محبوب احمد | ڈاکٹر عزیز فیصل | ڈاکٹر محمد حسین مشاہد رضوی | راحل بخاری | سلمان رسول | سید شاکر القادری | سید ضیا الدین نعیم | عباس عدیم قریشی | مجید اختر | محمد اسامہ سرسری | محمد عارف قادری | نورین طلعت عروبہ