"کرم اُن کا مکرّر ہو گیا ہے ۔ ذوالفقار علی دانش" کے اعادوں کے درمیان فرق

"نعت کائنات" سے
:چھلانگ بطرف رہنمائی, تلاش
 
(No difference)

حالیہ نظرثانی بمطابق 01:53, 22 نومبر 2017

شاعر : ذوالفقار علی دانش

نعتِ رسولِ آخر صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم=[ترمیم]

کرم اُن کا مکرّر ہو گیا ہے

اشارہ نعت کہنے کا ہُوا ہے


مرے وارث ہیں جبکہ خود محمد

نہ ڈر کوئی نہ خوفِ ابتلا ہے


ملا کرتا ہے مال و زر سبھی کو

مجھے عشقِ نبی ورثہ ملا ہے


ازل سے منتظِر جس کا تھا عالم

قریشی ہاشمی وہ آ گیا ہے


کبھی در سے نہ لوٹا کوئی خالی

کرم بے انتہا ، حد سے سوا ہے


کوئی ایسا سخی بھی ہے جہاں میں ؟

ہوئے لب وا ، اِدھر دامن بھرا ہے


مہ و مہر و فلک ، انجم ، زمیں سب

جہاں سارا محمد کی عطا ہے


سجی ہے محفلِ نعتِ محمد

درِ رحمت خدا کا آج وا ہے


کبھی نوبت نہ آئی مانگنے کی

محمد کی عطا سب سے جدا ہے


ز رُوئے آیہ ءِ یُوحیٰ ہے روشن

محمد کا کہا ، رب کا کہا ہے


رہے وردِ زباں نامِ محمد

یونہی آئے قضا ، دانش دعا ہے