نورِ حق نے اس طرح پیکر سنوارا نور کا ۔ شاکر القادری

"نعت کائنات" سے
This is the approved revision of this page, as well as being the most recent.
:چھلانگ بطرف رہنمائی, تلاش

"نعت کائنات " پر اپنے تعارفی صفحے ، شاعری، کتابیں اور رسالے آن لائن کروانے کے لیے رابطہ کریں ۔ سہیل شہزاد : 03327866659

شاعر: شاکر القادری

مطبوعہ : نعت رنگ ۔شمارہ نمبر 25

نعت رسول کریم صلی اللہ علیہ وسلم[ترمیم]

نورِ حق نے اس طرح پیکر سنوارا نور کا

نور گویا بن گیا ہے استعارہ نور کا

ہے کوئی ایسا بشر اس عالمِ امکان میں؟

سر سے پاؤں تک ہو جو اک شاہ پارا نور کا

نور دل ہے، نور سینہ، نور پیکر، نور جاں

نور کا سورہ(۱) ہے گویا استعارا نور کا

جو حجاباتِ خداوندی میں چمکا مدتوں

جالیوں سے دیکھ آیا ہوں وہ تارا نور کا

رات زلفوں کی بلائیں لے کے پیچھے ہٹ گئی(۲)

سانس(۳) لے کر صبح نے صدقہ اتارا نور کا

انشراحِ قلب و سینہ کا بیاں قرآن میں

نور کے دریا میں گویا ہے یہ دھارا نور کا

سرحدِ قوسین سے بھی ماورا معراج میں

بزم ’’او ادنی‘‘ میں چمکا اک ستارا نور کا(۴)

چاند، سورج، کہکشاں، تارے، دھنک اور روشنی

نور کے دریوزہ گر پائیں اتارا نور کا

ایک درِ بے بہا ہے یا ہے قطرہ نور کا

میری پلکوں پر فروزاں ہے جو تارا نور کا

سینہ بریاں، دیدہ گریاں کیجیے مجھ کو عطا

میرے دل پر بھی ہمیشہ ہو اجارا نور کا

اک نگاہِ لطف فرما دیجیے ہم پر حضور

ہم کو بھی درکار ہے بس اک اشارا نور کا

یا رسول اللہ اپنی کاوشیں مقبول ہوں

یہ ’’فروغِ نعت‘‘ بن جائے ادارہ نور کا


مزید دیکھیے[ترمیم]

اس ہفتے زیادہ پڑھے جانے والے کلام