مقدّر میں جہاں بھر کے فنا ہے ۔ ذوالفقار علی دانش

"نعت کائنات" سے
نظرثانی بتاریخ 19:41, 22 نومبر 2017 از ابو الحسن خاور (تبادلۂ خیال | شراکت)$7

(فرق) ←پرانی تدوین | Approved revision (فرق) | حالیہ نظرثانی (فرق) | →اگلا اعادہ (فرق)
:چھلانگ بطرف رہنمائی, تلاش

شاعر: ذوالفقار علی دانش

نعتِ رسولِ آخر صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم[ترمیم]

مقدّر میں جہاں بھر کے فنا ہے

مرے مولا ! مگر تجھ کو بقا ہے


تجھے ہی کبریائی بس روا ہے

مرے اللہ ! تُوسب سے بڑا ہے


میں تیرا ہوں ، ترا ہوں ، بس ترا ہوں

تُو میرا ہے ، مرا ہے ، بس مرا ہے


عبادت کرتا ہُوں میں بس تری ہی

مرے اللہ تُو میرا خدا ہے


تُو میرا ہر گھڑی ، ہر پل کا ساتھی

تُو میرا راہبر ہے رہنما ہے


تُو حل کرتا ہے سب کی مشکلوں کو

تُو ہر انسان کا مشکل کشا ہے


تُو ہی کرتا ہے غم میں دستگیری

نگہباں ہے مرا ، غم آشنا ہے


اطاعت ہے نبی کی ، رب کی طاعت

یہی قرآن میں لکھّا ہُوا ہے


سرِ محشر مری بھی لاج رکھنا

فقط رحمت کا تیری آسرا ہے


نبی کا امتی ہم کو بنایا

کرم یا رب ترا بے انتہا ہے


الہیٰ ! بخش دے دانش کو اپنے

یہ بندہ ہے تو عاصی ، پر ترا ہے



مزید دیکھیے[ترمیم]

پچھلا کلام | اگلا کلام | ذوالفقار علی دانش کی حمدیہ و نعتیہ شاعری | | ذوالفقار علی دانش