زبان کی اہمیّت اور الفاظ کے املائی مسائل ۔ پرویز ساحر

"نعت کائنات" سے
This is the approved revision of this page, as well as being the most recent.
:چھلانگ بطرف رہنمائی, تلاش

Pervez Sahir.jpg

مضمون نگار : پرویز ساحر

زبان کی اہمیت اور الفاظ کے املائی مسائل[ترمیم]

ہر بڑی زبان ہر معاشرے کا اصل ڈھانچا اور ہر قوم کی اصل پہچان ہوتی ہے ' جس پر اُس معاشرہ کے جملہ علوم ' فنون ' صنعت ' تہذیب ' ثقافت اور دیگر معاملات کا انحصار ہوتا ہے ۔ جس بھی زبان میں بڑا صوفی ' بڑا شاعر ' بڑا ادیب یا بڑا سائنس دان پیدا ہو جائے ' اُس زبان کےتا دیر زندہ رہنے کے امکانات وســیع تر ہو جاتے ہیں ۔


زبان ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اصلاً آگاہان ِ فن اور زبان دان شاعروں ادیبوں کے مناسب ترین تخلیقی استعمالات کے سبب ہی زندہ رہتی ہے ۔ قــرن ہا قــرن اور صدّی ہا صدّی کے مسلسل اور متواتر عِلمی ' فکری ' تاریخی ' تہذیبی ' سائنسی ســفر کے مراحل سے گذرنے کے بعد ہی ' کوئی زبان صــیقل شُدہ مروّج صورت اختیار کرتی ہے ' اور علمی ' سائنسی انداز میں اُس کے اساسی قواعد و ضوابط تشکیل پاتے ہیں ' جن کی رُو سے مستند لغات ترتیب دیئے جاتے ہیں ' ان قابل ِ استناد لغات میں نوّے فی صدّ الفاظ کا ذخیــرہ اُسی زبان کے لائقِ اعتبار کلاسیکی شعراؑ و اُدباؑ کے منظوم و منثُور تخلیقی کلام پر منحصر ہوتا ہے ۔


کسی بھی زبان پر مکمّل دست رس اور اُس کی کلاسیکی ادبی روایت سے مکمّل آگاہی کے بَہ غیر اُس سے یک سَــر ِ مُو اِنحــراف اور بغاوت بھی نہیں کی جا سکتی ۔ زبان میں لفظی اختراعات ' اور تصــرّفات بھی اسی زبان کے پہلے سے تشکیل کردہ قواعد و ضوابط ہی کی رُو سے کیے جا سکتے ہیں ۔


کسی بھی عِلم کی مبادیات ' اساسی کلّیوں اور زبان کے قواعد پر دست گاہ بَہ غیر ہٹ دھرمی کے ساتھ نئی لفظیات وضع نہیں کی جا سکتیں ( چاہے وہ مقامی زبانوں کی رعایت کے ساتھ ہی کیوں نہ ہوں ) ۔ تا وقتے کہ اختراعات اور تصرّفات یا زبان کی تشکیل ِ نَو کے لئے علاحدہ سے نئے قواعد ( جو علمی سائنسی طور پر لائق ِ اعتبار ' قابل ِ استعمال ہوں ' وضع نہ کر لیے جائیں ۔ جس طرح علم العروض میں مختلف بحور و اوزان کے افاعیل کو آپس میں ملا دینے سے کوئی نئی بحر یا وزن نہیں نکل آتا ۔۔ جس شخص کو جس زبان کے معیاری ادب اور اس زبان کی گالیاں اور لطائف تک سے آگاہی نہ ہو ' وہ اُس زبان پر دست رس حاصل نہیں کر سکتا ۔ قدیم فلسفہ کی رُو سے خود " خدا " بھی اصل میں ایک لفظ ہی ہے۔


آمدم بر سرِ مطلب ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ حرف' لفظ ' زبان کی اہمیّت ' قدر اور ضروری شُد بُد حاصل کرنا حدّ ِ درجہ ضروری ہے۔ اسی خصوص میں آج دریچہ ء گفت گو وا کیا جا رہا ہے ۔۔۔ اوَل تو یہ کہ اردو زبان میں کوئی بھی لفظ حرف " ڑ " اور کسی بھی ساکِن حرف سے شروع نہیں ہوتا ۔


دوِم اردو زبان میں واحد لفظ جو خالصتہً اس کا اپنا ہے ( دوسری کسی زبان میں نہیں ) وہ ہے " تلوار " ۔۔۔ انگریزی زبان کا ہر ایسا لفظ ' جو ساکِن حرف سے شروع ہوتا ہو اردو میں اُس سے پہلے الِف کا اضافہ کرنا لازمی ہے مثالاً اَسکول ' اسٹیشن ' اسپیکر ' اسٹول ' اسٹور ' اسکندر وغیرہم ۔۔


سوِم ہر زبان کے اپنے مخصوص حروفِ تہجّی ہیں ۔ جس میں اسی زبان کے قواعد کے مطابق بعضے حروف " حروف ِ علّت " کہلاتے ہیں جنہیں از راہ ضرورت ( تخلیقی جواز کے ساتھ ) گِرایا جا سکتا ہے اردو میں صرف پانچ حروفِ علّت ہیں جن میں " ع اور ح " قطعاً شامل نہیں ۔


ہر زبان میں بعضے حروف لکھت میں آتے ہیں پڑھت اور تقطیع میں شمار نہیں ہوتے یا لِکھت اور پڑھت میں آتے ہیں ' تقطیع کے دوران شمار نہیں ہوتے ۔۔۔ جیسے پریم لکھت میں پڑھت اور تقطیع میں پیم ' پریت لکھت میں پڑھت اور تقطیع میں پیت ۔۔۔۔۔ فریم لکھت میں پڑھت اور تقطیع میں فیم ' ٹریفک لکھت میں پڑھت تقطیع میں ٹیفک ۔۔۔۔۔


ہر زبان میں بعضے الفاظ کی اپنی ادائی اور گولائی ہوتی ہے جو لکھت میں چاہے گولائی کے ساتھ نہ ہوں مگر پڑھت کے وقت گولائی کے ساتھ ادا کیے جائیں گے مثلاً جانم ( جونم ) ' خانم ( خونم ) کالج ( کولج ) نالج ( نولج ) ٹیلی نار ( ٹیلی نور ) ' مارون ( مورون ) اِن باکس ( اِن بوکس ) الیکٹرانک ( الیکٹرونک ) ۔


عِلم ِ ہِجْــا و اِملاؑ سے نا بلد ہونے کے سبب عوام کے ساتھ ساتھ خواص ( شعراؑ و ادباؑ ) بھی اپنی قومی زبان کےصدّ ہا الفاظ کو غلَط تلفّظ ( حرکات و سکنات ) کے ساتھ شعر و نثر میں غلط وزن اور غلط معنوں میں برتنے لگے ہیں جو سراسر ان کی سہل انگاری ' تکاسُــل پسندی اور غیر سنجیدہ روی کا ثبوت ہے۔ تِس پر یہ عُذر پیش کیا جاتا ہے کہ یہ لفظ تو اب غلَط العام یا غلَط العوام ہے ۔ صاحبو !! غلَط العوام تو ہوتا ہی سِرے سے غلَط ہے' رہا معاملہ غلَط العام کا تو وہ بھی بیش تر شاعروں ادیبوں کی اپنی لا علمی اور شعری ادبی ضرورتوں کے تحت وزن میں کھپانے کے لئے ہی اکثر بَہ رُوے کار لایا جاتا ہے ' لسّانی اور زبان کے قواعد کی رُو سے غلط العام رائج ہو جانے کے باوجود غلط ہی کہلائے گا' ترکیب سے ہی ظاہر ہے ۔

حتّیٰ الوسّع غلط العام مستعمل الفاظ کے استعمالات سے بھی گریز برتنا چاہیے ۔ غلَط العوام الفاظ تو خیر قابل ِ قبول ہیں ہی نہیں ' ذیل میں ہر دو اقسام کے چند دَر چند الفاظ حوالوں کے طَور پر درج کیے جاتے ہیں :

غلَط العوام / غلَط العام الفاظ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ الفاظ ِ صحیح و درست

مشکور ( شکر گزار اور شکریہ کے معنوں میں ) ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ شکر گزار / ممنون

سمجھ نہیں آتی / آتا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ سمَجھ میں نہیں آتی / آتا

بد امنی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ بے امنی

نقص ِ امن ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ نقض ِ امن

نماز پڑھنا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ نماز ادا کرنا

اقدام اٹھانا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ قدم اٹھانا / اقدام کرنا

بُرا منانا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ بُرا ماننا

دلبر ۔۔ داشتہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ دل ۔۔ بَرداشتہ

کاروائی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کار رَوائی

یاداشت ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ یاد داشت

سو فی صدّ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ صدّ فی صدّ

فی الواقعہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فی الواقع

مصرعہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ مصرع

جامعہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ جامع

برقعہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ برقع

وقوعہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ وقوع

فطرانہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فطرہ

طلَبہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ طلَباؑ

مُحبّت ( م پر پیش ) ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ مَحبّت ( م بَہ فتح یعنی زبَر کے ساتھ )

استفادہ حاصل کرنا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ استفادہ کرنا

ماہ ِ رمَضاں کا مہینہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ماہ ِ رمَضاں ۔ رمَضاں کا مہینا

مہینہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ مہینا

پسینہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ پسینا

دوپٹّہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ دوپٹّا / دُپٹّا

بے پرواہ / لا پرواہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ بے پروا

پنجرہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ پنجرا

بُلبُلہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ بلبلا

پہرے دار ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ پہرہ دار

چُھوا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ چُھواؑ

چُھوئے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ چُھوے

چُھوئی مُوئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ چُھوی مُوی

اے دِلا ! ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ دِلا ! ۔ اے دل !

مِرے مرشدی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ مِرے مرشد / مرشدی !

ہاســا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ہانسا ( گِنوار کا ہانسا ' توڑے پانسا )

ہدّیہ ( بر وزن فعلن ) ۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ہدیّہ ( بر وزن فعولن )

قضیہ ( بر وزن فعلن ) ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ قضیّہ ( بر وزں فعولن )

خیریّت " نیک " مطلوب " چاہنا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ خیرت مطلوب ہونا

سنگ ِ مرمر کا پتّھر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ سنگ ِ مرمر

کوہ ِ ہمالیہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ہمالیہ

کوہ ِ طور ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ طَور

سیّد ( یاے بَہ فتح یعنی زبر کے ساتھ ) گالی ۔۔۔۔۔۔۔۔ سیّد بہ معنی اہل ِ بیت ( یاے بَہ کسر ( یعنی زیر سے )

بابَر ( ب بَہ فتح یعنی زبر کے ساتھ ( گھاس ) ۔۔۔۔۔۔۔ بابُر ( ب پیش کے ساتھ ) نام بہ معنی ببر شیر

سُــمَندر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ سَــمُندر ( بحر )

مصارع ( بہ معنی مصرع کی جمع ) ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ امصارع ( مصرع کی جمع ) ۔ مصرعات

سدھارَت / سدھارتا ! ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ سدارتھ ( نام Sidarth )

دوستا ! ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ دوست

یارا ( بہ معنی دوست ) ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ یار ۔ یَرا

کلمہ ( بر وزن فعلن ) ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کلِـمہ ( بر وزن فعَلُن )

ملکہ ( بر وزن فعلن ) ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ملِکہ ( بر وزن فعَلُن )

کُنواں / کنوئیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کنواؑں / کُنویں

دُھواں / دھوئیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ دھواؑں / دھویں

دائیں بائیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ دایں بایں

ثُمّہ آمین ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ثُمّ آمین

مخاطِب ( ط ۔۔ بَہ کسر یعنی زیر کے ساتھ ) ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ مخاطَب ( ط بَہ فتح یعنی زبَر کے ساتھ )

چھے ( عدد ) ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ چھ

تہ / بہ / سہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ تَہہ / بَہہ / سَہہ

وِحشت ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ وَحشت

عُجلت ( ع پیش کے ساتھ ) ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ عَجلت ( ع بَہ فتح یعنی زبَر کے ساتھ )

عِجــز ( ع بَہ کسر یعنی زیر کے ساتھ ) ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ عَجــز ( ع بَہ فتح یعنی زبر کے ساتھ )

آب ِ زمزم کا پانی / شب ِ لیلتہً القدر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ آب ِ زمزم / لیلتہً القدر

جمعہ رات ( جمرات ) کا دن ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ جمعہ رات / جمعرات

بُھول بُھلیّوں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ بُھول بَھلیّاں

مؤقّف ( بر وزن فعولن ) ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ موقف ( بر وزن فعلن / ق غیر مشدّد ہے)

لمحہ ء فکریہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ لمحہ ء فکر

مکتبہ ء فکر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ مکتب ِ فکر

لا الہٰ الّا اللہ محمّد الرسول اللہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ لا الہٰ الّا اللہُ محمّد رسول اللہ

اَصراف ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اسَراف

منصَب ( ص بَہ فتح یعنی زبر کے ساتھ متحرّک ) ۔۔۔۔۔ منصِب ( ص بَہ کسر یعنی زیر سے )

دن بَہ دن ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ رُوز بَہ رُوز

آئے رُوز ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ آئے دن

غور و غوض ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ غور و خوض

بینک ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ بنک

سگریٹ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ سگرٹ

ایڈیٹ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اڈیٹ

ایڈیٹر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اڈیٹر

ایڈیشن ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اڈیشن

ایڈریس ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اڈریس

نشست و برخاست ( برخواست ) ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ نشست برخاست

رنگ و رُوپ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ رنگ رُوپ

خطّ و کتابت ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ خطّ کتابت

چاق و چوبند ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ چاق چوبند

عَش عش کرنا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اَش اَش کرنا

سگرٹ جلانا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ سگرٹ سُلگانا

چیخ و پکار ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ چیخ پکار

لازم و ملزوم ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ لازم ملزوم

قریب ِ مَوت ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ قریب المَوت

قریب المرگ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ قریب ِ مرگ

درمیان میں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ درمیان / میان میں

در اصل میں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ در اصل ۔ اصل میں

ابھی بھی / کبھی بھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اب بھی / ابھی / کب بھی / کبھی

بہت شدید ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ شدید

بہُت کافی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کافی

صبح کا ناشتہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ناشتا

برَس ہا برَس ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ برسا برَس

سالا سال ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ سال ہا سال

چائے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ چاے

جنابہ ( خاتون کے لئے کلمہ ء تخاطب ) معنی نجاست ۔۔۔۔ جناب ( مرد و زن کے لئے )

گاؤں / پاؤں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ گانو / پانو

مہندی ( م ہ ں د ی ) / مہنگائی ( م ہ ں گ ا ء ی ) ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ منہدی ( م ں ہ د ی ) / منہگائی ( م ں ہ گ ا ء ی )

موسَـــــم ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ موسِـــم

محفل ِ مشاعرہ / بزم ِ مشاعرہ ۔۔۔۔۔۔۔۔ مشاعرہ ( مشاعرہ کہتے ہی شعر خوانی کی محفل اور بزم کو ہیں )

جلسہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ جلوس

سب سے بہترین ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔بہ ترین / بَہ سے بہتر

المیہ ( اَل میہ ) ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ الَمیہ ( الَم یہ )

اژدہام / از دہام ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ازدحام

جمائی لینا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ جماہی لینا

در گزر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ در گذَر

راہ گزر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ راہ گذر

علیحدہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ علیٰ حدہ ( علاحدہ )

حامی بھرنا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ہامی بھرنا ( ہاں بھی سے مل کر بنا بہ معنی اِثبات کرنا)

بھگدڑ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ بھگدر

پڑتال ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ پرتال

دل پذیر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ دل پذید

وطیرہ ۔ ناطہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ وتیرا / ناتا

تنزُّلی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ تنزُّل

بَرائے مہربانی / بَرائے کرم ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ از راہ ِ کرم ( مہربانی )

تابع دار ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ تابع

بَہ معہ / بَہ مع ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ مع

دو فریقین ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فریقین

مؤرّخہ ( یہ صرف ماضی کے لئے مخصوص ہے ) ۔۔۔ حال اور مستقبل کے لئے صرف " بَہ تاریخ " لکھّا چاہیے

شدّ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ تشدید

وَجہ ( بر وزن فعَل ) ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ وجہہ ( وَج ہہ ) بر وزن فعلُ

حالاکہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ حال آں کہ

چنانچہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ چناں چہ

انکساری ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ انکسار

مطمع ِ نظر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ مطمح ِ نظر

خورد و نوش ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ خور و نوش

قواید ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ قواعد

یثرب ( مدینہ کے معنوں میں ) اس کے معنی ہیں جاہلوں کی سر زمین ۔۔۔۔ درست مدینتہُ النبی صلعم

شہر ِ مدینہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ مدینہ ( اس کا معنی ہی شہر ہے )

حُور ( واحد نہیں جمع ہے ) حُوران جمع الجمع ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ حُورا ( واحد )

تہلکہ ( تہ لکہ ) ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ تہُلکا ( تہُل کا )

شور و غُل ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ شور غُل

صاحبِ صدر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ صاحب ِ صدارت

جناب ِ صدارت ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ جناب ِ صدر

بارات ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ برات

اشرَفی ( اَش رَفی ) ۔۔۔۔۔۔۔۔ اشَرفی ( اشَر فی )

برخَچے ( پر خَچے ) ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ پَرخچے ( پَرَخ چے )

کسَوٹی ( کسَو ٹی ) ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کسوَٹی ( کس وَٹی )

کیک رَس ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کیک رسک

واسکٹ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔ ویسٹ کوٹ

حیرانگی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ حیرانی

محتاجگی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ محتاجی

ناراضگی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ناراضی

درستگی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ درستی

چشمگی ( عین اور عینک سے مشتق) ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ چشمی

ادائیگی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ادائی

ظِفلگی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ طِفلی

بھروسہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ بھروسا

ٹھکانہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ٹھکانا

گھرانہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ گھرانا

معمّہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ معمّا

تمغہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ تمغا

ناشتہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ناشتا

کیمرہ / کمرہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کیمرا / کمرا

پٹاخہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ پٹاخا

پتہ ( بہ معنی اڈریس ۔ برگ ' خبر' عضو ) ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ پتا

روپیہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ روپیا

دھماکہ / دھوکہ ۔۔۔۔۔۔۔ دھماکا / دھوکا

سمجھوتہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ سمجھوتا

ڈرامہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ڈراما

تماشہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ تماشا

حلوہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ حلوا

عجُوبہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اَعجُوبہ

بگولہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ بگُولا

رکشہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ رکشا

بنگلہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ بنگلا

گھونسلہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ گھونسلا

بدلہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ بدلا

تولیہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ تولیا

چرخہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ چرخا

تھانہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ تھانا

راجہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ راجا

سُــقَم ( بر وزن فعَل ع بہ فتح متحرّک ) ۔۔۔۔۔ سُقم ( بر وزن فعل ع مسکون )

حذَف ( بر وزن فعَل ع بہ فتح متحرّک ) /۔۔۔۔۔۔۔۔ حذف ( بر وزن فعل ع مسکون )

رُوحِ رَواں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ رُوح و رَواں

اہلیان ( یہ اہلیہ کی جمع ہے ) ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اہَل ( مرد و زن کے لئے بہ طور واحد جمع )

بارش برسنا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ بارش ہونا / بادل برسنا ( باریدن )

دست دراز ( درازی ) ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ دراز دست ( دستی )

سینکڑہ / سینکڑوں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ سیکڑا / سیکڑوں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


ابھی ہزار ہا ایسے الفاظ ہیں ' جن کے تلفّظ ' املاؑ ' معانی ' تذکیریت و تانیثیت کے مسائل ہیں ۔ بعض الفاظ کے امّالے غلط بنائے گئے ہیں ۔۔ بہت سے الفاظ کا وزن اور معنی کچھ اور ہے' شاعر ادیب لا علمی کے سبب کچھ کا کچھ برتتے چلے جا رہے ہیں ۔ بہت سے الفاظ کی تصریفی شکلیں معرض ِ اشکال میں پڑی ہیں ۔ بعضے الفاظ لغت نویسوں اور مکتبی محقّقین نے غلط تحقیق کی بنیاد پر محض نقل در نقل کر کے ہول ناک غلطیاں کر رکّھی ہیں ۔


بہت سے بدیسی زبانوں کے الفاظ کی تارید بھی خلافِ قواعد اور محلّ ِ نظر ہے ۔ بہت سے الفاظ دبستانوں کے تفاوت کے موجب مذکّر و مؤنّث ہر دو طرح رائج ہیں ' بہت سے الفاظ نا مناسب اتّصالات اور غلط تخلیقی استعمالات کی وجہہ سے خواہ مخواہ راہ پا گئے جن کا زبان سے کوئی تعلّق نہیں ۔ یہ موضوع مفصّل جائزے اور محاکمے کا متقاضی ہے' جس پر مذید گفتگو کسی اور وقت پر اٹھا رکھتے ہیں ۔ لگتے ہاتھوں ابھی کے ابھی جس قدر معروضات ممکن ہوئے ' فی الفور حوالہ ء قرطاس کر دیئے ہیں ۔۔۔ ۔ زبان کی بے حرمتی اور اس کے ساتھ تخریب کارانہ کھیل واڑ کر کے کوئی بھی شاعر ادیب اور معاشرہ زندہ نہین رہ سکتا ۔۔ بَہ اِیں سبب جس قدر ممکن ہو ' ہم سب کو صحیح ترین ' فصیح ترین انداز میں زبان کو لکھنا پڑھنا بولنا چاہیے ( بَھلے وہ سہل اسلوب میں ہو یا ادق اسلوب میں )


( پرویز ساحر، ایبٹ آباد ، پاکستان ) ۔ مرقومہ بَہ تاریخ 5 جنوری / 2018ء ۔

مزید دیکھیے[ترمیم]

زبان و بیان آداب ِ نعت
نعت خواں اور نعت خوانی نعت گو شعراء اور نعت گوئی
شخصیات اور انٹرویوز معروف شعراء