جسم و جاں میں منعکس جلوہ تری تنویر کا​ ۔ بشیر حسین ناظم

"نعت کائنات" سے
This is the approved revision of this page, as well as being the most recent.
:چھلانگ بطرف رہنمائی, تلاش

شاعر : بشیر حسین ناظم

حمدِ باری تعالی جل جلالہ[ترمیم]

​ جسم و جاں میں منعکس جلوہ تری تنویر کا​

کیا تشکر ہو سکے بندے سے اس تقدیر کا​ ​

عبد ممکن کے لئے اے ہستی واجب تری​

حمد کہنا بالیقیں لانا ہے جوئے شیر کا​ ​

تو موفق ہو تو تیری حمد کی تطریز ہو​

ورنہ در مغلق رہے تحمید کی تحریر کا​ ​

تیرا باب مرحمت مفتوح ہے شام و سحر​

بخشنے والا ہے تو ہر ایک کی تقصیر کا​ ​

اور نعروں کے بھی پاسُخ ہوں گے جاں پرور ، مگر​

ہے جواب "اللہ اکبر" نعرہ تکبیر کا​ ​

رات کی تنہائیوں میں اے انیسِ قلب و جاں​

کیا مزہ آتا ہے تیرے نام کی تکریر کا​ ​

تیری طاعت ضامنِ فوز و فلاح و عافیت​

تیرا ذکرِ پاک باعث ، عزت و توقیر کا​ ​

تیرے آگے سر خمیدن ، قوتِ قلب و جگر​

تابِ روحِ مضمحل جلوہ تری تذکیر کا​ ​

جب تبتل سے ترے آگے کوئی سجدہ کرے​

خود بخود ہوتا ہے ساماں نفس کی تسخیر کا​ ​

تیرے ہی انوار سے ہے پیکرِ گل تابناک​

امر سے تیرے ہی نکھرا رنگ اس تصویر کا​ ​

ناظمِ بے علم و دانش تیرے لطفِ خاص سے​

بن گیا مطواع و ناصر دینِ عالمگیر کا