"انوار الہی کا خزینہ ہے مدینہ ۔ خرم خلیق" کے اعادوں کے درمیان فرق

"نعت کائنات" سے
:چھلانگ بطرف رہنمائی, تلاش
(نیا صفحہ: {{بسم اللہ}} شاعر: خرم خلیق ==== {{نعت}} ==== انوارِ الہی کا خزینہ ہے مدینہ مومن کے لیے وادِیِ سینا ہے...)
 
(نیا صفحہ: {{بسم اللہ}} شاعر: خرم خلیق ==== {{نعت}} ==== انوارِ الہی کا خزینہ ہے مدینہ مومن کے لیے وادِیِ سینا ہے...)
 
(No difference)

حالیہ نظرثانی بمطابق 08:31, 23 دسمبر 2017

شاعر: خرم خلیق

نعتِ رسولِ آخر صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم[ترمیم]

انوارِ الہی کا خزینہ ہے مدینہ

مومن کے لیے وادِیِ سینا ہے مدینہ


یثرب تھا کبھی جب نہ تھے اِس دل میں محمد

اب اُن کی سکونت سے یہ سینہ ہے مدینہ


ہاں، ہو گی کہیں اس کے مضافات میں جنت

منزل تو مسافر کی مدینہ ہے مدینہ


تھی ایک ہی طوفاں کے لیے نوح کی کشتی

پر سارے زمانوں کا سفینہ ہے مدینہ


ہے بیش بہا اس کے دمکنے سے یہ خرم

انگشتری دُنیا ہے، نگینہ ہے مدینہ

مزید دیکھیے[ترمیم]

زیادہ پڑھے جانے والے کلام