"امیر مینائی" کے اعادوں کے درمیان فرق

"نعت کائنات" سے
:چھلانگ بطرف رہنمائی, تلاش
(شراکتیں)
(تم پر میں لاکھ جان سے قربان یا رسول{{ص}})
لکیر 251: لکیر 251:
  
 
اب اس کی مشکلیں بھی ہوں آسان یا رسول{{ص}}
 
اب اس کی مشکلیں بھی ہوں آسان یا رسول{{ص}}
 +
 +
 +
====حکمراں وہ ہے جو ہے بندہ فرماں ان{{ص}} کا====
  
 
===شراکتیں===
 
===شراکتیں===
  
 
[[صارف:تیمورصدیقی]]
 
[[صارف:تیمورصدیقی]]

تـجدید بـمطابق 08:38, 20 جنوری 2017


نمونہ کلام

آنسو مری آنکھوں میں نہیں آئے ہوئے ہیں

آنسو مری آنکھوں میں نہیں آئے ہوئے ہیں

دریا تیری رحمت کے یہ لہرائے ہوئے ہیں


اللہ ری حیاء حشر میں اللہ کے آگے

ہم سب کے گناہوں پہ وہ شرمائے ہوئے ہیں


میں نے چمن خلد کے پھولوں کو بھی دیکھا

سب آگے ترے چہرے کے مرجھائے ہوئے ہیں


بھاتا نہیں کوئی ، نظر آتا نہیں کوئی

دل میں وہی آنکھوں میں وہی چھائے ہوئے ہیں


روشن ہوئے دل پر تو رخسار نبیﷺ سے

یہ ذرے اسی مہر کے چمکائے ہوئے ہیں


شاہوں سے وہیں کیا جو گدا ہیں ترے در کے

یہ اے شاہ خوباں تری شہ پائے ہوئے ہیں


آئے ہیں جو وہ بے خودی ءِ شوق کو سن کر

اس وقت امیر آپ میں ہم آئے ہوئے ہیں


اس آفتاب رخ سے اگر ہوں دو چار پھول

اس آفتاب رخ سے اگر ہوں دو چار پھول

حربا ہوں رنگ بدلیں ابھی بار بار پھول


دامن میں ہیں لیے ہوے بہر نثار شاہ

شبنم سے سینکروں گہر آبدار پھول


صیقل گر چمن ہو جو اس کی ہوائے لطف

پھر بلبلوں سے دل میں نہ رکھیں غبار پھول


اللہ ری لطافت تن جس سے مانگ کر

پہنے ہوئے ہیں پیرہن مستعار پھول


دستار پر اگر وہ گل کفش طرہ ہو

خورشید آسمان پہ کریں افتخار پھول


اللہ نے دیا ہے یہ اس کو جمال پاک

سنبل فدا ہے زلف پہ رخ پر نثار پھول


اللہ کیا دہن ہے کہ باتیں ہیں معجزہ

ہوتے ہیں ایک غنچہ سے پیدا ہزار پھول


وہ چہرہ وہ دہن کہ فدا جن پہ کیجئے

ستر ہزار غنچے بہتر زار پھول


امت کا بوجھ پشت پہ اپنے اٹھا لیا

طاقت کی بات ہے کہ بنا کو ہسا ر پھول


یہ فیض تھا اسی کا کہ حق میں خلیل کے

اخگر ہوئے تمام دم اضطرار پھول


ادنی یہ معجزہ تھا کہ اک چوب خشک میں

پتے لگے ہزار پھل آئے ہزار پھول


یا شاہ دیں ہیں تیری عنایت سے فیضیاب

جتنے ہیں رونق چمن روزگار پھول


امت پہ وقف باغ شفاعت ہے آپ کا

مجھ کو بھی اس چمن سے عنایت ہوں چار پھول


وقت دعا ہے ہاتھ دعا کو اٹھا امیر

جب تک کھلیں چمن میں سر شاخسار پھول


غنچے کی طرح آپکے دشمن گرفتہ دل

خنداں ہو دوست جیسے کہ روز بہار پھول


بن آئی تیری شفاعت سے رو سیاہوں کی

بن آئی تیری شفاعت سے رو سیاہوں کی

کہ فرد داخل دفتر ہوئی گناہوں کی


ترے فقیر دکھائیں جو مرتبہ اپنا

نظر سے اترے چڑھی بارگاہ شاہوں کی


ذرا بھی چشم کرم ہو تو لے اڑیں حوریں

سمجھ کے سرمہ سیاہی مرے گناہوں کی


خوشا نصیب جو تیری گلی میں دفن ہوئے

جناں میں روحیں ہیں ان مغفرت پناہوں کی


فرشتے کرتے ہیں دامان زلف حور سے صاف

جو گرد پڑتی ہے اس روضے پر نگاہوں کی


رکے گی آ کے شفاعت تری خریداری

کھلیں گی حشر میں جب گٹھڑیاں گناہوں کی


میں ناتواں ہوں پہنچوں گا آپ تک کیونکر

کہ بھیڑ ہوگی قیامت میں عذر خواہوں کی


نگاہ لطف ہے لازم کہ دور ہو یہ مرض

دبا رہی ہے سیاہی مجھے گناہوں کی


خدا کریم محمدﷺ شفیع روز جزا

امیر کیا ہے حقیقت میرے گناہوں کی


بازو در عرفاں کا ہے بازوئے محمدﷺ

بازو در عرفاں کا ہے بازوئے محمدﷺ

زنجیر اسی در کی ہے گیسوئے محمدﷺ


قوسین ہیں تفسیر دوا بروئے محمدﷺ

کونین تہ ظل دو گیسوئے محمدﷺ


منظور نظر اس کیے ہے سیر گلستاں

شاید کہ کسی پھول میں ہو بوئے محمدﷺ


امت میں جو مشہور ہے منشور شفاعت

گیسوئے محمدﷺ ہے وہ گیسوئے محمدﷺ


کس طرح زبردست نہ ہو دست ید محمدﷺ

بازو میں جو ہو قوت بازوئے محمدﷺ


سبطین محمدﷺ تھے اگر مصحف ناطق

قرآن کی تھی رحل دو زانوئے محمدﷺ


حاصل یہ کبھی عرش کو ہوتی نہ بلندی

ہوتا نہ اگر تکیہ پہلوئے محمدﷺ


چار آنکھیں کرے شیر فلک مجھ سے ہے کیا جا

سب جانتے ہیں میں ہوں سگ کوئے محمدﷺ


صحبت کو ہے تاثیر امیر اس میں نہیں شک

اصحاب میں کس طرح نہ ہو خوئے محمدﷺ


تم پر میں لاکھ جان سے قربان یا رسولﷺ

تم پر میں لاکھ جان سے قربان یا رسولﷺ

بر آئیں میرے دل کے بھِی ارمان یا رسولﷺ


کیوں دل سے میں فدا نہ کروں جان یا رسولﷺ

رہتے ہیں اس میں آپ کے ارمان یا رسولﷺ


کشتہ ہوں روئے پاک کا نکلوں جو قبر سے

جاری میری زباں پہ ہو قرآن یا رسولﷺ


دنیا سے اور کچھ نہیں مطلوب ہے مجھے

لے جاوں اپنے ساتھ میں ایمان یا رسولﷺ


اس شوق میں کہ آپ کے دامن سے جا ملے

میں چاک کر رہا ہوں گریباں یا رسولﷺ


کافی ہے یہ وسیلہ شفاعت کے واسطے

عاصی تو مگر ہوں پشیمان یا رسولﷺ


مشکل کشا ہیں آپ امیر آپ کا غلام

اب اس کی مشکلیں بھی ہوں آسان یا رسولﷺ


حکمراں وہ ہے جو ہے بندہ فرماں انﷺ کا

شراکتیں

صارف:تیمورصدیقی