یا رب ترے محبوب کا جلوا نظر آئے ۔ ریاض الدین سہروردی

"نعت کائنات" سے
This is the approved revision of this page, as well as being the most recent.
:چھلانگ بطرف رہنمائی, تلاش

شاعر: ریاض الدین سہروردی

نعتِ رسولِ آخر صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم[ترمیم]

یا رب ترے محبوب کا جلوا نظر آئے

اس نورِ مجسم کا سراپا نظر آئے


اے کاش کبھی ایسا بھی ہو خواب میں میرے

ہوں جس کی غلامی میں وہ آقا نظر آئے


روشن رہیں آنکھیں یہ مری بعدِ فنا بھی

گر وقتِ نزع وہ شہِ والا نظر آئے


تا حشر مری قبر میں ہو جائے اجالا

مرقد میں جو ان کا رُخ زیبا نظر آئے


جس در کا بنایا ہے گدا مجھ کو الہیٰ

اس در پہ کبھی کاش یہ منگتا نظر آئے


کس درجہ بنایا انہیں اللہ نے محبوب

ہر ایک کے دل کی وہ تمنا نظر آئے


آوؔ کہ شمع نعتوں کی ہر سمت جلائیں

ہر گوشئہ ہستی میں اجالا نظر آئے


کس آنکھ نے دیکھی ہے مثال ان کی جہاں میں

سرکار تو کونین میں یکتا نظر آئے


کعبہ اے ریاض اس کو بنالوں گا میں دل کا

گر نقشِ قدم مجھ کو نبی کا نظر آئے