کوئی مثل مصطفی کا کبھی تھا، نہ ہے، نہ ہوگا ۔ صبیح الدین رحمانی

"نعت کائنات" سے
This is the approved revision of this page, as well as being the most recent.
:چھلانگ بطرف رہنمائی, تلاش

"نعت کائنات " پر اپنے تعارفی صفحے ، شاعری، کتابیں اور رسالے آن لائن کروانے کے لیے رابطہ کریں ۔ سہیل شہزاد : 03327866659

شاعر : صبیح رحمانی

نعتِ رسولِ کریم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم[ترمیم]

کوئی مثل مصطفیٰ کا کبھی تھا، نہ ہے، نہ ہوگا

کسی اور کا یہ رتبہ کبھی تھا، نہ ہے، نہ ہوگا


اُنھیں خلق کر کےنازاں ہوا خود ہی دست قدرت

کوئی شاہکار ایسا کبھی تھا، نہ ہے، نہ ہوگا


کسی وہم نےصدا دی کوئی آپ کا مماثل

تو یقیں پکا اُٹھا کبھی تھا، نہ ہے، نہ ہوگا


مرےطاق جاں میں نسبت کےچراغ جل رہےہیں

مجھےخوف تیرگی کا کبھی تھا، نہ ہے، نہ ہوگا


میرےدامن طلب کو ہے انھی کےدر سےنسبت

کسی اور سےیہ رشتہ کبھی تھا، نہ ہے، نہ ہوگا


میں ہوں وقفِ نعت گوئی، کسی اور کا قصیدہ

میری شاعری کا حصہ کبھی تھا، نہ ہے، نہ ہوگا


سر حشر ان کی رحمت کا صبیح میں ہوں طالب

مجھےکچھ عمل کا دعویٰ کبھی تھا، نہ ہے، نہ ہوگا


نعت خوانوں میں کلام کی پذیرائی[ترمیم]

| صبیح رحمانی کی آواز میں

| زبیب مسعود کی آواز میں

| خورشید احمد کی آواز میں


مزید دیکھیے[ترمیم]

صبیح رحمانی | شہ دوسرا کا ہمسفر نہ ہوا نہ ہے نہ ہوگا ۔ رہبر چشتی