پیشِ حق مژدہ شفاعت کا سناتے جائینگے۔ امام احمد رضا خان بریلوی

"نعت کائنات" سے
This is the approved revision of this page, as well as being the most recent.
:چھلانگ بطرف رہنمائی, تلاش

شاعر : امام احمد رضا خان بریلوی

کتاب : حدائق بخشش

نعتِ رسولِ کریم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم[ترمیم]

پیشِ حق مژدہ شفاعت کا سناتے جائیں گے

آپ روتے جائیں گے ہم کو ہنساتے جائیں گے


دل نکل جانے کی جا ہے آہ کن آنکھوں سے وہ

ہم سے پیاسوں کے لئے دریا بہاتے جائیں گے


کُشتگانِ گرمیِ محشر کو وہ جانِ مسیح

آج دامن کی ہوا دے کر جِلاتے جائیں گے


گُل کِھلے گا آج یہ اُن کی نسیمِ فیض سے

خون روتے آئیں گے ہم مسکراتے جائیں گے


ہاں چلو حسرت زدو سنتے ہیں وہ دن آج ہے

تھی خبر جس کی کہ وہ جلوہ دکھاتے جائیں گے


آج عیدِ عاشقاں ہے گر خدا چاہے کہ وہ

ابروئے پیوستہ کا عالم دکھاتے جائیں گے


کچھ خبر بھی ہے فقیرو! آج وہ دن ہے کہ وہ

نعمتِ خلد اپنے صدقے میں لٹاتے جائیں گے


خاک اُفتادو! بس اُن کے آنے ہی کی دیر ہے

خود وہ گر کر سجدے میں تم کو اُٹھاتے جائیں گے


وسعتیں دی ہیں خدا نے دامنِ محبوب کو

جرم کُھلتے جائیں گے اور وہ چھپاتے جائیں گے


لو وہ آئے مسکراتے ہم اسیروں کی طرف

خرمنِ عصیاں پر اب بجلی گراتے جائیں گے


آنکھ کھولو غمزدو! دیکھو وہ گریاں آئے ہیں

لوحِ دل سے نقشِ غم کو اب مٹاتے جائیں گے


سوختہ جانوں پہ وہ پرجوش رحمت آئے ہیں

آبِ کوثر سے لگی دل کی بجھاتے جائیں گے


آفتاب اُن کا ہی چمکے گا جب اوروں کے چراغ

صِر صِرِ جوشِ بَلا سے جھلملاتے جائیں گے


پائے کوباں پل سے گزریں گے تِری آواز پر

رَبِّ سَلِّمْ کی صَدا پر وَجد لاتے جائیں گے


سرورِ دیں لیجے اپنے ناتوانوں کی خبر

نفس و شیطاں، سیّدا! کب تک دباتےجائیں گے


حشر تک ڈالیں گے ہم پیدائشِ مولیٰ کی دھوم

مِثل فارس نجد کے قلعےگراتے جائیں گے


خاک ہوجائیں عَدُو جل کر مگر ہم تو رؔضا

دم میں جب تک دم ہے ذکر اُن کا سناتےجائیں گے


مزید دیکھیے[ترمیم]

قافلے نے سوئے طیبہ کمر آرائی کی | پیشِ حق مژدہ شفاعت کا سناتے جائینگے | چمک تجھ سے پاتے ہیں سب پانے والے

امام احمد رضا خان بریلوی | حدائق بخشش