پاٹ وہ کچھ دھار پہ کچھ زار ہم

"نعت کائنات" سے
This is the approved revision of this page, as well as being the most recent.
:چھلانگ بطرف رہنمائی, تلاش

شاعر: امام احمد رضا خاں بریلوی

کتاب : حدائق ِ بخشش - حصہ اول

نعت ِ رسول ِ کریم ِ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم[ترمیم]

پاٹ وہ کچھ دھار یہ کچھ زار ہم

یا الٰہی کیوں کر اتریں پار ہم


کس بلا کی مے سے ہیں سرشار ہم

دن ڈھلا ہوتے نہیں ہشیار ہم


تم کرم سے مشتری ہر عیب کے

جنسِ نامقبولِ ہر بازار ہم


دشمنوں کی آنکھ میں بھی پھول تم

دوستوں کی بھی نظر میں خار ہم


لغزشِ پا کا سہارا ایک تم

گرنے والے لاکھوں ناہنجار ہم


صدقہ اپنے بازووں کا المدد

کیسے توڑیں یہ بت پندار ہم


دم قدم کی خیر اے جانِ مسیح

در پہ لائے ہیں دلِ بیمار ہم


اپنی رحمت کی طرف دیکھیں حضور

جانتے ہیں جیسے ہیں بدکار ہم


اپنے مہمانوں کا صدقہ ایک بوند

مر مٹے پیاسے ادھر سرکار ہم


اپنے کوشہ سے نکالا تو نہ دو

ہیں تو حد بھر کے خدائی خوار ہم


ہاتھ اٹھا کر ایک ٹکڑا اے کریم

ہیں سخی کے مال میں حقدار ہم


چاندنی چھتکی ہے ان کے نور کی

آو دیکھیں سیر طور و نار ہم


ہمت اے ضعف ان کے در پر گر کے ہوں

بے تکلف سایہ ءِ دیوار ہم


با عطا تم شاہ تم مختار تم

بے نوا ہم زار ہم ناچار ہم


تم نے تو لاکھوں کو جانیں پھیر دیں

ایسا کتنا رکھتے ہیں آزار ہم


اپنی ستّاری کا یا رب واسطہ

ہوں نہ رسوا برسرِ دربار ہم


اتنی عرضِ آخری کہہ دو کوئی

ناو ٹوٹی آ پڑے منجدھار ہم


منہ بھی دیکھا ہے کسی کے عفو کا

دیکھ او عصیاں نہیں بے یار ہم


میں نثار ایسا مسلماں کیجیے

توڑ ڈالیں نفس کا زنّار ہم


کب سے پھیلائے ہیں دامن تیغ عشق

اب تو پائیں زخم دامن دار ہم


سنّیت سے کھٹکے سب کی آنکھ میں

پھول ہو کر بن گئے کیا خار ہم


ناتوانی کا بھلا ہو بن گئے

نقش پائے طالبانِ یار ہم


دل کے ٹکڑے نذرِ حاضر لائے ہیں

اے سگانِ کوچہ ءِ دلدار ہم


قسمتِ ثور و حرا کی حرص ہے

چاہتے ہیں دل میں گہرا غار ہم


چشم پوشی و کرم شانِ شما

کارِ ما بے باکی و اصرار ہم


فصلِ گل سبزہ صبا مستی شباب

چھوڑیں کس دل سے درِ خمار ہم


میکدہ چھٹتا ہے للہ ساقیا

اب کے ساغر سے نہ ہوں ہشیار ہم


ساقیِ تسنیم جب تک آ نہ جائیں

اے سیہ مستی نہ ہوں ہشیار ہم


نازشیں کرتے ہیں آپس میں ملک

ہیں غلامانِ شہِ ابرار ہم


لطفِ از خود رفتگی یا رب نصیب

ہوں شہیدِ جلوہ ¿ رفتار ہم


ان کے آگے دعویِ ہستی رضا

کیا بکے جاتا ہے یہ ہر بار ہم