وہ شمع اجالا جس نے کیا چالیس برس تک غاروں میں ۔ ظفر علی خان

"نعت کائنات" سے
This is the approved revision of this page, as well as being the most recent.
:چھلانگ بطرف رہنمائی, تلاش

شاعر: ظفر علی خان

نعتِ رسولِ آخر صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم[ترمیم]

وہ شمع اجالا جس نے کیا چالیس برس تک غاروں میں

اکِ روز جھلکنے والی تھی سب دنیا کے درباروں میں


رحمت کی گھٹائیں پھیل گئیں افلاک کے گنبد گنبد پر

وحدت کی تجلی کوند گئی آفاق کے سینا زاروں میں


گرارض وسما کی محفل میں لولاک لما کا شور نہ ہو

یہ رنگ نہ ہوں گلزاروں میں یہ نور نہ ہو سیاروں میں


وہ جنس نہیں ایمان جسے لے آئیں دکانِ فلسفہ سے

ڈھونڈے سے ملے گی عاقل کو یہ قرآں کے سیپاروں میں

جو فلسفیوں سے کھل نہ سکا اور نکتہ وروں سے حل نہ ہوا

وہ رازاک کملی والے نے بتلا دیا چند اشاروں میں


جس میکدے کی ایک بوند سے بھی لب کج کلہوں کے تر نہ ہوئے

ہیں آج بھی ہم بے مایہ گدا اس میکدے کے سرشاروں میں


ہم حق کے علمبرداروں کا ہے اب بھی نرالا ٹھاٹ وہی

بادل کی گرج تکبیروں میں بجلی کی تڑپ تلواروں میں


ہیں کرنیں اک ہی مشعل کی ابوبکرؓ وعمرؓ، عثمانؓ، علیؐ

ہم مرتبہ ہیں یارانِ نبی کچھ فرق نہیں ان چاروں میں