نعتیہ شاعری میں اصناف ِسخن کی جلوہ سامانیاں-ڈاکٹر عزیزؔاحسن

"نعت کائنات" سے
This is the approved revision of this page, as well as being the most recent.
:چھلانگ بطرف رہنمائی, تلاش

Naat kainaat aziz ahsan 10.jpg

"نعت کائنات " پر اپنے تعارفی صفحے ، شاعری، کتابیں اور رسالے آن لائن کروانے کے لیے رابطہ کریں ۔ سہیل شہزاد : 03327866659

مضمون نگار : عزیز احسن

مطبوعہ : دبستان نعت ۔ شمارہ نمبر 2

"نعت کائنات " پر اپنے تعارفی صفحے ، شاعری، کتابیں اور رسالے آن لائن کروانے کے لیے رابطہ کریں ۔ سہیل شہزاد : 03327866659
"نعت کائنات"پر موقر ادبی جریدوں کو آن لائن کیا جا رہا ہے ۔اپنے رسالے / جریدے کو آن لائن کرنے کے لیے رابطہ کیجئے ۔ دبستان نعت ۔ انڈیا کا تازہ شمارہ آن لائن پڑھیے ۔

نعتیہ شاعری میں اصنافِ سخن کی جلوہ سامانیاں[ترمیم]

اجملؔ نقشبندی کے نعتیہ مجموعوں کی تعداد تقریباً نصف درجن ہو گئی ہے۔ اس بات سے شاعر کے اس والہانہ شغف کا اندازہ ہوتا ہے جو اسے مدحتِ رسول ﷺ سے ہے۔ زیر نظر مجموعۂ نعت میں شاعری کی قدیم اصناف کے ساتھ ساتھ جدید عہد میں متعارف ہونے والی نئی اصناف میں بھی نعتیہ مضامین کی تاب و تب نظر آتی ہے۔ شاعر کا یہ رُجحان جذبے سے اسلوب کی طرف جست کی عکاسی کرتا ہے۔

ابتدا میں ’’حمدیئے‘‘ ہائیکو یاہائیک کی ہیئت فارم میں ہیں۔ ان میں ہائیک کی مروّجہ بحر پانچ سات پانچ کی پابندی کی گئی ہے۔ مافیہ( Content )کے حوالے سے ایک ہائیک پیش خدمت ہے جس میں شاعر نے اُمتِ مسلمہ کی تاریخ بھی رقم کردی ہے اور بیدار مغزوں کی قلبی بے چینی اور اضطرابِ دروں کو بھی سمو دیا ہے۔ کرب کے باوجود تعبیروں کے کھوج کا عمل رکا نہیں ہے۔ یہ رجائیت بھی بین السطور رقم ہو گئی ہے۔

اے رب الارباب!

تعبیروں کی کھوج میں ہم ہیں

صدیوں سے بے خواب!

اس ہائیک کی قرأت (Reading) سے احساس کا جو تموج پیدا ہوتا ہے، کتاب کی خواندگی کے مرحلے میں وہ حرف بہ حرف اور لفظ بہ لفظ بڑھتا ہی جاتا ہے۔

نعتیہ شاعری کے ضمن میں شعریت (اسلوب یا Style) اور شریعت (مافیہ کلام یا Content) دونوں کا توافق( Harmony )ضروری ہے۔ اجمل کے کلام سے ظاہر ہوتا ہے کہ وہ شعریت اور شریعت کا امتزاج پیدا کرنے کی کوشش کرتے ہیں۔ شاعر موصوف نے دُعا کی ہے:

مری سرشت ترے مصطفیٰؐ کی سنت ہو

مرے خیال کو حسنِ خیال دے اللہ

’’حضوری سے پہلے حضوری کے بعد‘‘ میں شامل تقاریظ سے پتہ چلتا ہے اور شاعرکی تصویر سے بھی ظاہر ہوتا ہے کہ ان کی شخصیت پر مصرعِ اولیٰ کی قبولیت کے اثرات بحسن و خوبی مرتب ہونے لگے ہیں۔ رہا حسنِ خیال کا معاملہ تو اس کے ثبوت میں یہی بات کہی جا سکتی ہے کہ جس شاعر کے خیال کا مرکزی نقطہ ہی طیبہ کی سرزمین ٹھہرے اس کے خیال میں حسن پیدا نہ ہونے کاگمان بھی سوئے ادب ہے۔

"نعت کائنات : اس طرح کے بے شمار اہم صفحات کا زخیرہ ہے ۔ اگر آپ حمد و نعت کے حوالے سے کوئی سرگرمی کر رہے ہیں تو ہمیں ضرور مطلع کریں ۔ مزید اہم صفحات دیکھیے

ماہیے میں بھی اجملؔ صاحب نے طبع آزمائی کی ہے۔ اس صنف میں بھی ان کے بیان کا بانکپن دیدنی ہے۔


سر چشمۂ رحمت ہے

لاریب مدینہ ہی

عشاق کی جنت ہے

سانیٹ کی صنف‘ مغربی ادب سے اُردو میں آئی ہے۔ اُردو میں سانیٹ لکھے تو گئے ہیں لیکن زیادہ مقبول نہیں ہو سکے۔ نعت نگاروں نے بھی سانیٹ کے فارم میں عشق رسول ﷺ کے اظہار کی کوششیں کی ہیں۔زیر نظر کتاب میں بھی چند سانیٹ ہیں جن کا اسلوب شگفتہ ہے اور متن (Text )کے حوالے سے بھی لائق توجہ ہیں کیونکہ ان میں سیرتِ محبوب رب العالمینﷺ کی تنویریں، تاریخِ اسلام کی جھلکیاں اور بعثتِ رسول ِکریم علیہ الصلوٰۃ والتسلیم سے عالم انسانی کو پہنچنے والے فیضان کا تذکرہ ہے۔ ایک سانیٹ ’’روشنی‘‘ :

"نعت کائنات"پر غیر مسلم شعراء کی شاعری کے لیے بھی صفحات تشکیل دیے گئے ہیں ۔ ملاحظہ فرمائیں : غیر مسلم شعراء کی نعت گوئی

دہر میں ہر طرف تھی تاریکی

تیرہ بختی کا سخت موسم تھا

ظلمتوں، نفرتوں کا عالم تھا

بحرِ ظلمات، ارض گیتی تھی

مہر، اُلفت ، خلوص، پیار وفا

ہوگیا تھا جہان سے مفقود

بربریت کی انتہا کے سوا

نسلِ آدم میں کچھ نہ تھا موجود

ایسے میں اک کرن محبت کی

کوہِ فاراں کی پشت سے پھوٹی

چاک جس نے رِدائے ظلمت کی

ہر طرف تیز روشنی پھیلی


میرا اس تیز روشنی کوسلام

یعنی اللہ کے نبی ﷺ کو سلام

اسی طرح آزاد نظم( Free Verse) جسے نعت گو شعراء نے کم اپنایا ہے، اجملؔ نقشبندی کے اس نعتیہ مجموعے کی زینت بنی ہے۔

یہ کوشش بھی خاصی کامیاب ہے۔ اس نظم میں طلبِ خیر کی تڑپ اور طلب کے ساتھ ساتھ انکشافِ حقیقت کا پرتوَ بھی ہے اور ہادیٔ برحق رسولِ رحمت ﷺ کی بعثت سے انسانیت کو حاصل ہونے والی طمانیت کا احساس بھی:

"نعت کائنات : اس طرح کے بے شمار اہم صفحات کا زخیرہ ہے ۔ اگر آپ حمد و نعت کے حوالے سے کوئی سرگرمی کر رہے ہیں تو ہمیں ضرور مطلع کریں ۔ مزید اہم صفحات دیکھیے

پھر مجھے پھیر کر خیر کی راہ پر

گامزن کردیا اور میں کہہ اُٹھا

اے سراپا عطا! عکسِ نورِ خدا !

مصطفیٰ ﷺ مجتبیٰ ﷺ!

اک تیرا ہے فقط

راستہ خیر کا

راستہ خیر کا!

قدیم اصنافِ سخن میں غزل کی ہیئت میں بہت سی نعتیں ہیں جن کامزاج غزل کی روایت سے ہم آہنگ ہے۔ ان نعتیہ غزلوں میں جذبۂ عشق نبوی علیٰ صاحبہا الصلوٰۃ والسلام بڑی سادگی سے جزوِ ہنر بن گیا ہے۔ غزل کے دو مصرعوں میں نقش گری کرنے والے شعراء بعض اوقات ایسے اشعار کہہ جاتے ہیں جن میں انسانی حافظے پر نقش ہو جانے کی خوبی ہوتی ہے۔ اجملؔ صاحب کے بھی اشعار اس خصوصیت کے حامل ہیں۔ مثلا:

مدحِ سرکار ﷺ میں یوں عمر ہماری گزرے

جیسے حسانؓ نے جامیؒ نے گزاری گزرے

کوئی شب ان کے تصور سے نہ گزرے خالی

کوئی شب ان کے نہ دیدار سے عاری گزرے

دل کی بے راہ روی بے جہتی ناممکن

رہنما آپ کا ذکر، آپ کی یاد، آپ کا نام

جس کے دل میں نبی ﷺ کی اُلفت نئیں

اس کو حاصل خدا کی قربت نئیں

نبیﷺ کی عنایت کے صدقے ہے آساں

سنا ہے کہ یہ راہِ مدحت کڑی ہے

کفر کی تیرہ ہوا اپنی جگہ

دین کا روشن دیا اپنی جگہ

میں ذرّہ اور صحرا آپﷺ

میں اک قطرہ دریا آپ ﷺ

پڑھئے انﷺ پر درود ادب کے ساتھ

نام جنﷺ کا ہے نامِ رب کے ساتھ

ہر وقت مدحتوں کے اُجالوں میں گم رہوں

محبوبِ کبریا ٭کے خیالوں میں گم رہوں

"نعت کائنات"پر غیر مسلم شعراء کی شاعری کے لیے بھی صفحات تشکیل دیے گئے ہیں ۔ ملاحظہ فرمائیں : غیر مسلم شعراء کی نعت گوئی

درجِ بالا اشعار غزل کی شگفتہ بیانی، فصاحت اور سلاست کے باعث حافظے میں محفوظ ہوجانے کی قوت رکھتے ہیں۔

اس کتاب میں مسدس، مخمس اور رباعیات بھی ہیں۔ان اصناف کی موجودگی سے اندازہ ہوتا ہے کہ اجملؔ نقشبندی اصناف کو وسیلۂ اظہار بنانے پر قادر بھی ہیں۔


اجملؔ نقشبندی نے بزمِ مدحت گزاراں میں داخل ہوتے ہوئے شعر کی زیادہ سے زیادہ ہیئتوں کو رفعتِ مضمون سے ہمکنار کیا ہے۔ انھیں یہ بھی سعادت حاصل ہے کہ ان کا تو سنِ خیال زیادہ تر حمد ونعت ہی کی مقدس وادیوں میں اپنی جولانیاں دکھاتا ہے اور اس سے بڑی سعادت یہ ہے کہ ان کا کلام عقیدے اور عقیدت کا لائق ِتحسین امتزاج نظر آتا ہے۔


پس نوشت:

٭’’کبریا ‘‘…اللہ رب العزت کا نام نہیں صفت ہے۔ اس لیے اس غلط العام استعمال کو ترک کرنا بہتر ہے۔ سورۂ یونس اور سورۂ جاثیہ دیکھیے۔(اور حاصل ہوجائے تم دونوں کو سرداری[کبریا] اس ملک میں …۷۸:۱۰)…(اور اسی کو سزاوار ہے بڑائی[کبریا] آسمانوں اور زمین میں…۳۷:۴۵)۔

"نعت کائنات : اس طرح کے بے شمار اہم صفحات کا زخیرہ ہے ۔ اگر آپ حمد و نعت کے حوالے سے کوئی سرگرمی کر رہے ہیں تو ہمیں ضرور مطلع کریں ۔ مزید اہم صفحات دیکھیے
نعت کائنات پر نئے صفحات
Gujrat.jpg شیر شاہ سوری کے زمانے میں تشکیل پانے والا شہر گجرات پاکستان کا اٹھارواں بڑا شہر ہے ۔ گجرات کا نعتیہ منظر نامہ مزید دیکھیے
Logo naat virsa.jpg 2017 میں نعت ورثہ نے بہترین نعت کی تلاش کے لیے ایک ایونٹ منعقد کیا۔ جس میں 161 شعراء ۔ مزید دیکھیے
Arooz.jpg پہلا سبق ۔ ہجا ۔ مبتدیان شاعری کے لیے بنیادی رموز سمجھنا اتنا مشکل بھی نہیں ۔ ۔ مزید دیکھیے
Inhiraf adabi forum.jpg انحراف ادبی فورم اسلام آباد میں تو فعال ہے ہی یہ فیس بک کی ادبی سرگرمیوں کا بھی سرخیل ہے ۔ مزید دیکھیے
چوپال.jpg چوپال ادبی فورم نے ادب کی ترویج کے لیے فیس بک پر ادبی گروپس میں منفرد سرگرمیوں کو بنیاد ڈالی ۔ مزید دیکھے
Khusboo e Hassan.jpg تسلیم صابری نے ARY-QTV پر نعت سے منسلک لوگوں کو خراج اعقیدت پیش ۔ مزید دیکھیے
Naat kainaat irfan siddiqui.jpg بھارت سے تعلق رکھنے والے عرفان صدیقی کی اردو شاعری کی خوشبو پاکستان تک محسوس کی گئی ۔ مزید دیکھیے
Khummar Bara Bankvi.jpg نعت ہو یا غزل، خمار بارہ بنکوی نے جو بھی کہا اس میں وہی سلیقہ نظر آیا جو ان کی پہچان ہے ۔ مزید دیکھیے
Abu ul Khair kashafi.jpg ڈاکٹر ابو الخیر کشفی کی کتاب نعت اور تنقید نعت پر پروفیسر محمد اکرم کا تفصیلی مضمون ۔ مزید دیکھیے
ماہ "جون" کی اہم شخصیات