سَرور کہوں کہ مالک و مَولیٰ کہوں تجھے

"نعت کائنات" سے
This is the approved revision of this page, as well as being the most recent.
:چھلانگ بطرف رہنمائی, تلاش

شاعر: امام احمد رضا خان بریلوی

سَرور کہوں کہ مالک و مَولیٰ کہوں تجھے[ترمیم]

سَرور کہوں کہ مالک و مَولیٰ کہوں تجھے

باغِ خلیل کا گُلِ زیبا کہوں تجھے


حِرماں نصیب ہوں تجھے امّید گہ کہوں

جانِ مراد و کانِ تمنّا کہوں تجھے


صبحِ وطن پہ شامِ غریباں کو دوں شَرف

بیکس نواز گیسووں والا کہوں تجھے


اللہ رے تیرے جسمِ منور کی تابشیں

اے جانِ جاں میں جانِ تجلّا کہوں تجھے


مجرم ہوں اپنے عفو کا ساماں کروں،شہا !

یعنی شفیع روزِ جزا کا کہوں تجھے


اِس مُردہ دل کو مژدہ حیاتِ ابد کا دوں

تاب و توانِ جانِ مسیحا کہوں تجھے


تیرے تو وصف عیبِ تناہی سے ہیں بَری

حیراں ہوں، میرے شاہ! میں کیا کیا کہوں تجھے


کہہ لے گی سَب کچھ اُن کے ثنا خواں کی خامشی

چپ ہو رہا ہے کہہ کے میں کیا کیا کہوں تجھے


لیکن رضا نے ختمِ سخن اس پہ کر دیا

خالق کا بندہ خلق کا آقا کہوں تجھے