جو مقدس ہے زمانے میں مگر دیکھا ہے ۔ حافظ لدھیانوی

"نعت کائنات" سے
This is the approved revision of this page, as well as being the most recent.
:چھلانگ بطرف رہنمائی, تلاش

شاعر : حافظ لدھیانوی

نعتِ رسولِ آخر صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم[ترمیم]

جو مقدس ہے زمانے میں مگر دیکھا ہے

ہم نے اللہ کے محبوب کا گھر دیکھا ہے


جس سے لوٹا ہی نہیں کوئی بھی مایوس کبھی

جو ہے بے مثل زمانے میں وہ در دیکھا ہے


ظلمت جاں کو کیا جس کی کرن نے روشن

شہر رحمت میں عجب نور سحر دیکھا ہے


میری جھولی میں گرے اشک گہر بن بن کر

میں نے دامن میں دعاوں کا اثر دیکھا ہے


میں نے دیکھے ہیں برستے ہوئے انوار یہاں

لطف ہر لحظہ بانداز دگر دیکھا ہے


جب کبھی اٹھ گئی اطراف مدینہ پہ نظر

سایہ لطف کو تا حد نظر دیکھا ہے


ان کے دربار میں یارائے دعا بھی نہ رہا

اپنی لکنت پہ کرم ان کا مگر دیکھا ہے


کون گلہائے عنایت کو سمیٹے حافظ

تنگ ہر شخص نے دامان نظر دیکھا ہے

مزید دیکھیے[ترمیم]

اپنے تازہ کلام اس نمبر پر وٹس ایپ کریں 00923214435273

اپنے ادارے کی نعتیہ سرگرمیاں، کتابوں کا تعارف اور دیگر خبریں بھیجنے کے لیے رابطہ کیجئے۔Email.png Phone.pngWhatsapp.jpg Facebook message.png

نئے اضافہ شدہ کلام
"نعت کائنات " پر اپنے تعارفی صفحے ، شاعری، کتابیں اور رسالے آن لائن کروانے کے لیے رابطہ کریں ۔ سہیل شہزاد : 03327866659
نئے صفحات