باریاب کی شاعری سے انتخاب - اسلام الدین

"نعت کائنات" سے
This is the approved revision of this page, as well as being the most recent.
:چھلانگ بطرف رہنمائی, تلاش

انور مسعود کے نعیتہ کلام باریاب سے انتخاب

بشکریہ : اسلام الدین

اپنے ادارے کی نعتیہ سرگرمیاں، کتابوں کا تعارف اور دیگر خبریں بھیجنے کے لیے رابطہ کیجئے۔Email.png Phone.pngWhatsapp.jpg Facebook message.png


انتخاب[ترمیم]

وادیء بطحا میں اک اُمی پیمبر بھیج کر

کس نے کی انسانیت کی دستگیری سوچئے


اسی نے عقل کے سینے کا انشراح کیا

اسی نے بابِ تمدن کا افتتاح کیا


آپ کو بخشا ہے منشور ِ ہدایت اس نے

جس کو معلوم ہے انسان کی فطرت کیا ہے

دل ِ انساں کو بدل ڈالا ہے اس نے انور

اس سے بڑھ کر کوئی اعجازِ نبوت کیا ہے


نجات صرف تری پیروی میں ہے مضمر

زمانے بھر کو یہ ادراک ہونے والا ہے

مجھے نہیں ہے کسی گمرہی کا اندیشہ

ترا چراغِ ہدایت مرا حوالہ ہے


ہے ثبت تری ذات سے تاریخ ِ بشر میں

وہ عزم جو تھکتا نہیں طائف کے سفر میں

تو نور ِ ازل تاب سر ِ مطع ِ تخلیق

فیضان ِ ضیا تجھ سے ہے دامان ِ سحر میں

خورشید کے کاسے میں عطا تیری ضیا کی

خیرات ترے نور کی کشکول ِ قمر میں

تو سارے جہانوں کے لئے مژدۂ رحمت

احوال زمانوں کے سبھی تیری نظر میں

درپیش ہے بے سمت مسافت کی اذیت

اس دور کا انسان ہے دانش کے بھنور میں

حیراں ہے تری شان ِ توکل پہ زمانہ

چولھا بھی نہ جلتا تھا مہینوں ترے گھر میں

اشکوں کو زمیں پر بھی میں گرنے نہیں دیتا

سرمایہ تری یاد کا ہے دیدۂ تر میں

انور میرے دیوان میں ہے نعت ِ پیمبر

کیا توشۂ عقبٰی ہے مرے رخت ِ سفر میں


جادۂ مستقیم کی کس کو ہے اتنی آگہی

راہ شناس و راہبر ، کون حضور کے سوا

کس کی حدیثِ خوش اثر صدق و صفا ہے سربہ سر

صاحبِ قول ِ معتبر ، کون حضور کے سوا

کس کی ضیا سے تابناک بزم ِ جہان ِ آب و خاک

سرّ ِ وجود ِ بحروبر ، کون حضور کے سوا

ویسے تو ہر زبان پر نعرۂ آشتی مگر

امن کا ہے پیام بر، کون حضور کے سوا


تجلیوں سے تری مستنیر و تابندہ

زمان ِ ماضی و عصر روان و آئندہ

جبین ِ وقت کا جھومر ترا وجود ِ منیر

رخ ِ حیات ترے نور سے درخشندہ

ہے تیری ذات ِ مبارک میں دلکشی ایسی

قریب سے بھی حسین ، دور سے بھی زیبندہ

جو تجھ سے ربط نہ رکھے وہ روح پژمردہ

جو تیری یاد سے غافل ، وہ دل نہیں زندہ

جہاں میں تجھ سے نہیں ہے عظیم تر کوئی

نظام ِ عدل و مساوات کا نمائندہ

حسین تجھ سے کوئی جس نے بڑھ کے دیکھا ہو

جہاں میں ایسی نہیں کوئی چشم ِ بینندہ

تمام تفرقہ پرداز فلسفے فانی

پیامِ امن ترا لازوال و پائندہ

پریدہ رنگ لغت تیری مدحتوں کے حضور

ہر ایک لفظ خجل، سرنگون و شرمندہ

زہے مقدرِِ سلمان ِ فارسی انور

وہی ہے اصل میں جوئندہ اور یابندہ


پیمبروں کے بیانوں میں گونجنے والا

وہ نام سارے زمانوں میں گونجنے والا

بس ایک نام انہی کا خدا کے نام کے بعد

موذنوں کی اذانوں میں گونجنے والا

ہے اسم ِ سید و سالار و سرورِ عالم

دلوں میں، ذہنوں میں ، جانوں میں گونجنے والا

بہ شکل ِ مدحت و نعت و قصیدہ و توصیف

وہ نام ساری زبانوں میں گونجنے والا

وہ دختران ِسرِبام و دف بکف انور

وہ نام ان کے ترانوں میں گونجنے والا


چاند وہ تابشِ انوار کہاں سے لائے

رونقِ چہرۂ سرکار کہاں سے لائے

اللہ اللہ وہ رعنائی ِ کامل انکی

پھول وہ رنگ وہ مہکار کہاں سے لائے

مدح و توصیف ِ پیمبر نہیں آساں ایسی

کوئی پیرایۂ اظہار کہاں سے لائے


کس طرح اس نے زمانے کو بدل ڈالا تھا

اُس زمانے پہ تو ششدر ہے زمانہ سارا


کیا میسر ہے میسر جس کو یہ جگنو نہیں

نعت کیا لکھے گا جسکی آنکھ میں آنسو نہیں

٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭

الاماں! یہ فتنہ ہائے افتراق!

یہ ہوائے زہر آگین ِ نفاق!

کتنے ٹکڑوں میں بٹی ہے آپکی امت حضور!

کوئی اسم ایسا نہیں دنیا میں آقا جس قدر

اتحاد آموز ہے اسمِ گرامی آپکا

ہونٹ بھی آپس میں مل جاتے ہیں جس کے ورد سے

کیوں نہیں آپس میں ملتے

نام لیوا آپ کے؟

٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭

یہ کس کا اسم ِ گرامی زباں پی آیا ہے

نہ پوچھ آنکھ سے اب لطف ِ گریۂ پیہم

مرے حضور کا ہر لفظ گوہرِ یکتا

مرے حضور کی ہر بات آیۂ محکم

حضور اب تو ملے چشم ِ التفات کی بھیک

بڑا طویل ہے یہ انتظار کا عالم

جھلس رہی ہے کڑے موسموں میں کشتِ حیات

ہے کب سے منتظر سایۂ سحاب ِ کرم


انکی تعلیم کی ترویج ہو دنیا بھر میں

بس یہ خواہش ہے کہ دنیا کا بھلا ہو جائے

کیا صلہ بخش ہے فرمان پذیری انکی

جو بجا لائے وہ محبوبِ خدا ہو جائے

ایسے انصاف پہ مبنی ہے شریعت انکی

قفسِ ظلم سے انسان رہا ہو جائے

ہے مسلماں کے لئے اوجِ سعادت انور

کہ وہ ناموسِ رسالت پہ فدا ہو جائے


پتوار قلم کی ہے تو کاغذ کا سفینہ

اور سامنے اک قلزم ِ اوصاف و کمالات

کیا عرض کروں ان کی غم ِ گردشِ ایام

پوشیدہ نہیں انکی نظر سے مرے حالات

مزید دیکھیے[ترمیم]

اپنے ادارے کی نعتیہ سرگرمیاں، کتابوں کا تعارف اور دیگر خبریں بھیجنے کے لیے رابطہ کیجئے۔Email.png Phone.pngWhatsapp.jpg Facebook message.png

نئے اضافہ شدہ کلام
"نعت کائنات " پر اپنے تعارفی صفحے ، شاعری، کتابیں اور رسالے آن لائن کروانے کے لیے رابطہ کریں ۔ سہیل شہزاد : 03327866659
نئے صفحات